کیا ہے پی سی او ڈی کا علاج؟پولی سسٹک اووری سنڈروم کی علامات ، وجوہات اور علاج۔

Noor Health Life

  کیا آپ جانتے ہیں کہ نوجوان خواتین میں ھونے والا تکلیف دہ مرض پی سی او ڈی پنپ رہا ہے. غنیمت یہ ہے کہ طب یونانی میں کامیاب علاج ہے. دراصل دور حا ضر مٰیں خواتین اپنی صحت کے سلسلہ میں مردوں کے مقابلے زیادہ فکر مند ھوا کرتی ھیں اپنی جسمانی صحت وتندرستی اور خوبصورتی پر خصوصی توجہ رکھتی ھیں. یہاں تک کہ ضعیف العمر عورتوں میں بھی یہ خاصیت موجود ھوا کرتی ھے پھر بھی ایک مرض جو بھت تیزی سے پھیل رہا ہے جس کو طب جدید میں PCOD یعنی پولی سسٹک اورین ڈیزیز Poly cystic ovarian disease جس کو طب یونانی میں بثور انثین یا سلعہ قازیفین کھتے ہیں.جو کہ وبا کی شکل اختیار کررہا ہے. ہر  10 میں سے 8عورتیں اس موزی مرض میں مبتلا پائی جا رہی ھیں. اس ضمن میں انسٹی ٹیوٹ آف گائینا کلوجی وکٹوریا میڈیسن کالج اینڈریسرچ لندن نے ایک تازہ سروے میں ہندوستان میں مزکورہ مرض کے تعلق سے گہری تشویش ظاہر کی ھے .پھر بھی وزارت صحت، حکومت ھند کی جانب سے کوئی پیش رفت نہیں ھوپا رہی ھے. اس مرض کے دفاع کیلئے طب یونانی کے نجی اداروں نے بھت اچھی ریسرچ کا مظاہرہ کیا ہے. الحمدلله سینکڑوں متاثرہ مریضاؤں نے شفاء پائی ہے جبکہ طب جدید کے پاس سوائے سر جری Surgery کے کوئی خواطر خواہ علاج دریافت نھیں ہو پایا ھے.

  کیا ہیں اسباب ؟

  1-:غذائی بے اعتدالی، زیادہ چربی، روغن، کھٹائی سے پر غذاوں کا استعمال،
  2-: بے وقت کھانا کھانا، رات کو کھا کر فوراً سوجانا،
  3-:بے وقت سونا بے وقت جاگنا،
  4-:ایام حیض کا دیر سے آنا،
  5-: ہارمون میں خرابی اور غیر متوقع ہارمون کا ترشح ہونا
  6-:شروعاتی دور میں رحم اور عنق الرحم uterus & cervix کی رسولی یا گانٹھ Fibroid امتحان بلمس کرنے پر کھجور کی گٹھلی یا چنے کے برابر معلوم ہوتی ہے.
  7-: اکثر وبیشتر گانٹھ Fibroid چھوٹی شکل میں اور تعداد میں بھت زیادہ ھوا کرتی ھے جس کو Multiple cyst کھتے ھیں.
  8-:یہ مر ض عموماً بلوغت کے بعد سے حیض کے بند ھونے کی عمر تک کے درمیان کبھی بھی ہو سکتا ہے.
  9-: ایام حیض کی بے قاعدگی اس مرض کو اور شدید بنا دیتی ھے.
  10-: فساد خون اگر چہ بار بار ہو تو بھی اس مرض کے ھونے کے خدشات قوی ھوجایا کرتے ھیں،
  11-: تھائرائڈ گلینڈ Thyroid gland کا بگاڑ اگر ھو جائے تو PCOD ھونا لازمی ھے، تجربات یہ بتاتے ہیں کی تھائرائڈ گلینڈ کا ترشح جس کو Thyro stimuliting harmon کھتے ھیں اگرچہ اس کا ترشح ضرورت سے زیادہ بڑھ جائے تو انڈے دانی اور بچے دانی Ovaries & Uterus میں گانٹھ بن جاتی ھے. بعض اوقات زخم والی گانٹھیں بھی ھو جاتی ھیں. جو بھت تکلیف دہ ھوا کرتی ہیں.
  12-: قاطع حمل دوائںیں جیسا کی عموماً فیملی پلاننگ کے دوران اکثر خواتین بچہ نہ ھو یا دیر میں ھو تو اس وجہ سے ھارمونل پلس یا گولیوں کا استعمال کرتی ھیں. جن کا سائڈ ایفیکٹ یہ ھوتا ھے کی انڈے دانی یا بچے دانی میں شدید گانٹھیں بن جاتی ھیں.
  13-:کسی قسم کا کوئی آپریشن جو پیٹ کے اطراف یا ناف کے نیچے کی جانب ھوا ھو.
  14-: شدید ڈپریشن کی مریضائیں اس مرض میں مبتلا پائی گئی ھیں.
  15-: کثرت جماع یا بھت زیادہ ھم بستری کرنے سے بھی بھت سی مریضاؤں میں PCOD کی شکایت لاحق ہو جاتی ھے.
  16-: جنسی بے راہ روی بھی اس مرض کو دعوت دیتی ھے.
  17-: زیادہ عمر میں شادی کرنے سے بھی خواتین اس مرض میں مبتلا ھوجاتی ھیں.
  18-: بھت سے وٹامن اور رطوبات کے فقدان سے بھی PCOD ھوجایاکرتا ھےمثلاً وٹامن سی، وٹامن کے، وٹامن ڈی،آئرن، فولک ایسیڈ وغیرہ کی شدید کمی.

  کیا ہیں علامات Symptoms ؟

  1-: ناف کے نیچے اور کمر کے دونوں جانب درد اور کھنچاو رہتا ہے.
  2-: صبح نیند سے بیداری میں پریشانی محسوس ھوتی ھے.
  3-: صبح نیند سے اٹھنے پر قے اور متلی کا احساس ھوتا ھے.اور چکر بھی محسوس ہوتا ہے.
  4-: ناف کے اطراف رہ رہ کر سوجن آجاتی ھے گویا گمان یہ ھوتا ھے کی مریضہ حمل pregnent سے ھے
  5-: پاخانہ و پیشاب صاف نہیں رہتا ھے.
  6-: سفید رطوبت Lechorrehea کی شکایت ھمہ وقت ھوجایا کرتی ھے.
  7-: چہرہ سفیدی یا زردی مائل اور مرجھایا رہتا ہے.
  8-: بھوک کی کمی ھوجاتی ھے.
  9-: بال وقت بے وقت جھڑنے لگتے ھیں.
  10-: خیالات متغیر، منتشر اور منفی ھوجایا کرتے ھیں.
  11-: ایام حیض بے وقت اور شدید درد کے ساتھ آتے ھیں.
  12-: حمل نہیں ٹھر پاتا ھے.
  13-: بعض مریضاؤں کو کمر میں بھی شدید درد رہتا ھے.
  14-: نیند کی شدید کمی ھوجاتی ھے.
  15-:  غیرشادی شدہ خواتین کے مقابلے شادی شدہ خواتین میں علامات Symptoms زیادہ شدید اور تکلیف دہ ھوا کرتی ھیں.
  16-:مزاج چڑچڑھا ھوجاتا ہے.
  17-: بعض ادھیڑ عمر کی عورتوں میں جب مرض ھوتا ھے تو حیض وقت سے پہلے ہی بند ھوجاتے ھیں.
  18-: بعض اوقات مریضہ کو تیز بخار بھی چڑھنے اترنے لگتا ھے.
  19-: سر کے ادھے حصے میں شدید درد رہنے لگتا ھے.
  20-: بعض مریضاوں میں بلڈ پرشر بھی بڑھنے لگتا ھے.

  کیا ہے علاج   Treatment ؟

  شروع علاج میں مریضہ کی تشخیص Diagnosis میں تھوڑی مشکلات پیش آتی ھیں.مریضہ شرم وحجاب میں اپنی تکلیف کامکمل طور پراظہار نہیں کر پاتی ھے.

  سونو گرافی میں زیرناف Pelvic region کی جانچ کرنے پر آسانی سے معلوم ھوجایا کرتا ھے.
  نبض میں ابطی اور انقباظی حرکت تیز معلوم ھوتی ھے.حرارت قدرے زیادہ ہوتی ہے،مزاج حاررطب ہوتا ہے.

  پرہیز و غذا :

  ہر قسم کی کھٹی اشیاء مثلاً لیموں، ٹماٹر، دہی، اچار. اس کے علاوہ بڑے کاگوشت، گوبھی، بینگن اور تمام بادی نیز تیل وگھی سے تیار غذا کا سخت پرہیز لازمی ھے جب تک علاج مکمل نہیں ھو جاتا ہے.
  طب یونانی کو الحمدلله یہ امتیاز حاصل ہے کی ہر امراض کیلئے تیر بہدف نسخہ جات دواؤں کی شکل میں موجود ہیں بس صحیح تشخیش کے مطابق دوائیں تجویز کی جائیں.

  دوائیں Medicine :
  ھواشافئ.
  معجون محلل سلعہ 10 گرام، معجون محلل جگر 10 گرام، سفوف سلعہ رحمی 5 گرام، دن میں 3 مرتبہ.

  سفوف ڈنڈی سرخ 5 گرام، سفوف رطوبت نسواں 5 گرام، دن میں 2 مرتبہ سادے پانی سے استعمال کریں. نور ہیلتھ زندگی کا ساتھ دو اور غریبوں کی مدد کریں اگر آ پ کسی کا ساتھ دوگے ا تو خدا آ پ کا ساتھ دے گا کوشش کریں خدا کی رضا کے لئے غریبوں کا ساتھ دیں۔پولی سسٹک اووری سنڈروم کی علامات ، وجوہات اور علاج۔

پولی سسٹک اوورین سنڈروم ( پی سی او ایس) ایسی حالت ہے جو عورت کے ہارمون کی سطح کو متاثر کرتی ہے۔

پی سی او ایس والی خواتین نارمل ہارمونز کی معمول سے زیادہ مقدار پیدا کرتی ہیں۔ یہ ہارمون کا عدم توازن ان کے جسم کو ماہواری چھوڑنے کا باعث بنتا ہے اور ان کے لیے حاملہ ہونا مشکل بناتا ہے۔

پی سی او ایس چہرے اور جسم پر بالوں کی افزائش اور گنجا پن کا سبب بھی بنتا ہے۔ اور یہ طویل مدتی صحت کے مسائل جیسے ذیابیطس اور دل کی بیماریوں میں حصہ ڈال سکتا ہے۔

پیدائش پر قابو پانے والی گولیاں اور ذیابیطس کی دوائیں (جو انسولین کے خلاف مزاحمت کا مقابلہ کرتی ہیں ، ایک پی سی او ایس کی علامت) ہارمون کے عدم توازن کو ٹھیک کرنے اور علامات کو بہتر بنانے میں مدد کر سکتی ہیں۔

پی سی او ایس کی ممکنہ وجوہات اور عورت کے جسم پر اس کے ممکنہ اثرات پر ایک نظر ڈالنے کے لیے یہ آرٹیکل پڑھیں۔

پی سی او ایس کیا ہے؟

اس کی کیا وجہ ہے؟

۔1 جین

۔2 انسولین کی مزاحمت

۔3 سوزش

پی سی او ایس کی عام علامات

بےقائدہ ماہواری

بھاری خون بہنا

بالوں کی نشوونما

ایکنی

وزن کا بڑھاؤ

مردانہ نمونہ گنجا پن

جلد کا سیاہ ہونا

پی سی او ایس آپ کے جسم کو کس طرح متاثر کرتا ہے؟

میٹابولک سنڈروم

سلیپ ایپنیا

اینڈومیٹریل کینسر

ذہنی دباؤ

حمل اور پی سی او ایس

پی سی او ایس کے علاج کے لیے خوراک اور طرز زندگی کی تجاویز

پی سی او ایس کیا ہے؟

پی سی او ایس ہارمونز کا مسئلہ ہے جو خواتین کو ان کے بچے پیدا کرنے کے سالوں (15 سے 44 سال) کے دوران متاثر کرتی ہے۔ اس عمر کے گروپ میں 2.2 اور 26.7 فیصد خواتین کے درمیان پی سی او ایس ہے

بہت سی خواتین کو پی سی او ایس ہوتا ہے لیکن وہ نہیں جانتے۔ ایک تحقیق میں ، پی سی او ایس والی 70 فیصد خواتین کی تشخیص نہیں ہوئی تھی

پی سی او ایس ایک عورت کے بیضہ دانی کو متاثر کرتا ہے ، تولیدی اعضاء جو ایسٹروجن اور پروجیسٹرون پیدا کرتے ہیں – ہارمون جو ماہواری کو منظم کرتے ہیں۔ بیضہ دانی ہارمونز کی ایک چھوٹی سی مقدار بھی پیدا کرتی ہے جسے اینڈروجن کہتے ہیں۔

بیضہ دانی انڈے کو مرد کے نطفہ سے کھاد کے لیے چھوڑتی ہے۔ ہر مہینے انڈے کے اخراج کو بیضہ کہا جاتا ہے۔

فولیکل سٹیمولیٹنگ ہارمون ( ایف ایس ایچ) اور لوٹینائزنگ ہارمون ( ایل ایچ) ، جو پیٹیوٹری غدود میں پیدا ہوتے ہیں ، اویولیشن کو کنٹرول کرتے ہیں

ایف ایس ایچ انڈاشی کو ایک فالیکل پیدا کرنے کے لیے متحرک کرتا ہے – ایک تھیلی جس میں انڈا ہوتا ہے – اور پھر ایل ایچ انڈاشی کو ایک میچور انڈے کو جاری کرنے کے لیے متحرک کرتا ہے۔

پی سی او ایس ایک “سنڈروم” یا علامات کا گروپ ہے جو بیضہ دانی اور اس کے عمل کو متاثر کرتا ہے۔ اس کی تین اہم خصوصیات ہیں:

بیضہ دانی میں سسٹ

مرد ہارمون کی اعلی سطح

بےقائدہ یا چھوٹی ہوئی ماہواری

پی سی او ایس میں ، بہت سے چھوٹے ، سیال سے بھرے تھیلے بیضہ دانی کے اندر بڑھتے ہیں۔ لفظ “پولیسیسٹک” کا مطلب ہے “بہت سیسٹس”

یہ تھیلے دراصل فالیکل ہیں ، ہر ایک میں ایک اممیچور انڈا ہوتا ہے۔ انڈے کبھی بھی اتنے پختہ نہیں ہوتے کہ بیضہ کو متحرک کرسکیں۔

بیضہ کی کمی ایسٹروجن ، پروجیسٹرون ، ایف ایس ایچ اور ایل ایچ کی سطح کو تبدیل کرتی ہے۔ پروجیسٹرون کی سطح معمول سے کم ہے ، جبکہ اینڈروجن کی سطح معمول سے زیادہ ہے۔

اضافی مرد ہارمونز ماہواری میں خلل ڈالتے ہیں ، لہذا پی سی او ایس والی خواتین کو معمول سے کم ادوار ملتے ہیں۔

اس کی کیا وجہ ہے؟

ڈاکٹر بالکل نہیں جانتے کہ پی سی او ایس کی کیا وجہ ہے۔ ان کا ماننا ہے کہ مرد ہارمونز کی زیادہ مقدار انڈاشی کو ہارمون پیدا کرنے اور عام طور پر انڈے بنانے سے روکتی ہے۔

جین ، انسولین مزاحمت ، اور سوزش سب کو اضافی اینڈروجن کی پیداوار سے منسلک کیا گیا ہے۔

۔1 جین

مطالعے سے پتہ چلتا ہے کہ پی سی او ایس خاندانوں میں چلتا ہے
یہ ممکن ہے کہ بہت سے جین – صرف ایک نہیں – اس حالت میں شراکت کرتے ہیں۔

۔2 انسولین کی مزاحمت

پی سی او ایس والی 70 فیصد خواتین میں انسولین کی مزاحمت ہوتی ہے ، اس کا مطلب یہ ہے کہ ان کے خلیے انسولین کا صحیح استعمال نہیں کر سکتے

انسولین ایک ہارمون ہے جو لبلبہ پیدا کرتا ہے تاکہ جسم کو توانائی کے لیے کھانے سے شوگر استعمال کرنے میں مدد ملے۔

جب خلیے انسولین کا صحیح استعمال نہیں کر سکتے تو جسم کی انسولین کی مانگ بڑھ جاتی ہے۔ لبلبہ معاوضہ کے لیے زیادہ انسولین بناتا ہے۔ اضافی انسولین بیضہ دانیوں کو زیادہ مرد ہارمون پیدا کرنے کے لیے متحرک کرتی ہے۔

موٹاپا انسولین مزاحمت کی ایک بڑی وجہ ہے۔ موٹاپا اور انسولین مزاحمت دونوں ٹائپ 2 ذیابیطس کا خطرہ بڑھا سکتے ہیں۔

۔3 سوزش

پی سی او ایس والی خواتین کے جسم میں اکثر سوزش کی سطح بڑھ جاتی ہے۔ زیادہ وزن ہونا بھی سوزش میں حصہ ڈال سکتا ہے۔ مطالعات نے اضافی سوزش کو ہائی اینڈروجن کی سطح سے جوڑا ہے۔

پی سی او ایس کی عام علامات

کچھ خواتین اپنی پہلی مدت کے دوران علامات دیکھنا شروع کردیتی ہیں۔ دوسرے صرف دریافت کرتے ہیں کہ ان کے پاس پی سی او ایس ہے جب ان کا وزن بہت زیادہ ہو گیا ہے یا انہیں حاملہ ہونے میں دشواری ہوئی ہے۔

:پی سی او ایس کی سب سے عام علامات یہ ہیں

بےقائدہ ماہواری

بیضہ دانی کی کمی بچہ دانی کی پرت کو ہر مہینے بہنے سے روکتی ہے۔ پی سی او ایس والی کچھ خواتین کو سال میں آٹھ سے کم ادوار ملتے ہیں یا بالکل نہیں ۔

بھاری خون بہنا

بچہ دانی کی پرت طویل عرصے تک بنتی ہے ، لہذا آپ کو جو ادوار ملتے ہیں وہ معمول سے زیادہ بھاری ہو سکتے ہیں۔

بالوں کی نشوونما

اس حالت میں 70 فیصد سے زیادہ خواتین اپنے چہرے اور جسم پر بال اگاتی ہیں – بشمول ان کی پیٹھ ، پیٹ اور سینے۔ بالوں کی زیادہ نشوونما کو ہیرسوٹزم کہا جاتا ہے۔

ایکنی

مرد ہارمون جلد کو معمول سے زیادہ تیل دار بنا سکتے ہیں اور چہرے ، سینے اور اوپری کمر جیسے علاقوں پر ایکنی کا سبب بن سکتے ہیں۔

وزن کا بڑھاؤ

پی سی او ایس والی 80 فیصد خواتین کا وزن زیادہ ہے یا موٹاپا ہے ۔

مردانہ نمونہ گنجا پن

کھوپڑی کے بال پتلے ہو جاتے ہیں اور گر سکتے ہیں۔

جلد کا سیاہ ہونا

۔ جلد کے گہرے دھبے جسم کی کریز میں بن سکتے ہیں جیسے گردن ، کمر اور سینوں کے نیچے۔
سر درد ہارمون کی تبدیلیاں کچھ خواتین میں سردرد پیدا کر سکتی ہیں۔

پی سی او ایس آپ کے جسم کو کس طرح متاثر کرتا ہے؟

معمول سے زیادہ اینڈروجن لیول رکھنے سے آپ کی زرخیزی اور آپ کی صحت کے دیگر پہلوؤں پر اثر پڑ سکتا ہے۔
بانجھ پن:
حاملہ ہونے کے لیے ، آپ کو بیضہ دانی کرنی پڑتی ہے۔ وہ خواتین جو باقاعدگی سے بیضہ دانی نہیں کرتی ہیں وہ زیادہ سے زیادہ انڈوں کو کھاد دینے کے لیے نہیں چھوڑتیں۔ پی سی او ایس خواتین میں بانجھ پن کی ایک اہم وجہ ہے۔

میٹابولک سنڈروم

پی سی او ایس والی 80 فیصد خواتین کا وزن زیادہ ہے یا موٹاپا ہے ۔ موٹاپا اور پی سی او ایس دونوں آپ کے لیے خطرہ بڑھاتے ہیں:

ہائی بلڈ شوگر

ہائی بلڈ پریشر

کم ایچ ڈی ایل “اچھا” کولیسٹرول۔

ہائی ایل ڈی ایل “خراب” کولیسٹرول۔

:ایک ساتھ ، ان عوامل کو میٹابولک سنڈروم کہا جاتا ہے ، اور وہ اس کے لیے خطرہ بڑھاتے ہیں

مرض قلب

ذیابیطس

اسٹروک

سلیپ ایپنیا

یہ حالت رات کے دوران سانس لینے میں بار بار رکنے کا سبب بنتی ہے ، جو نیند میں خلل ڈالتی ہے۔

زیادہ وزن والی خواتین میں سلیپ اپنیا زیادہ عام ہے – خاص طور پر اگر ان کے پاس پی سی او ایس بھی ہو۔ پی سی او ایس نہ ہونے والوں کے مقابلے میں موٹاپے اور پی سی او ایس دونوں خواتین میں سلیپ اپنیا کا خطرہ 5 سے 10 گنا زیادہ ہے

اینڈومیٹریل کینسر

بیضہ دانی کے دوران ، بچہ دانی کی تہہ بہہ جاتی ہے۔ اگر آپ ہر مہینے بیضوی نہیں کرتے ہیں تو ، استر بن سکتا ہے۔

یوٹیرن کی ایک موٹی پرت آپ کے اینڈومیٹریال کینسر کے خطرے کو بڑھا سکتی ہے۔

ذہنی دباؤ

دونوں ہارمونل تبدیلیاں اور علامات جیسے ناپسندیدہ بالوں کی نشوونما آپ کے جذبات پر منفی اثر ڈال سکتی ہے۔ پی سی او ایس والے بہت سے لوگ آخر کار ڈپریشن اور بے چینی کا شکار ہوتے ہیں۔

حمل اور پی سی او ایس

پی سی او ایس معمول کے ماہواری میں خلل ڈالتا ہے اور حاملہ ہونا مشکل بنا دیتا ہے۔ پی سی او ایس والی 70 سے 80 فیصد خواتین میں زرخیزی کے مسائل ہیں

یہ حالت حمل کی پیچیدگیوں کے خطرے کو بھی بڑھا سکتی ہے۔

پی سی او ایس والی عورتیں دوگنا امکان رکھتی ہیں کہ عورتیں بغیر کسی شرط کے اپنے بچے کو قبل از وقت ڈلیوری کرسکتی ہیں۔ وہ اسقاط حمل ، ہائی بلڈ پریشر ، اور حمل ذیابیطس کے لیے بھی زیادہ خطرہ ہیں۔

تاہم ، پی سی او ایس والی خواتین زرخیزی کے علاج کا استعمال کرتے ہوئے حاملہ ہوسکتی ہیں جو بیضہ دانی کو بہتر بناتی ہیں۔ وزن کم کرنا اور بلڈ شوگر کی سطح کو کم کرنا صحت مند حمل کے امکانات کو بہتر بنا سکتا ہے۔

پی سی او ایس کے علاج کے لیے خوراک اور طرز زندگی کی تجاویز

پی سی او ایس کا علاج عام طور پر طرز زندگی میں تبدیلیوں جیسے وزن میں کمی ، خوراک اور ورزش سے شروع ہوتا ہے۔

آپ کے جسمانی وزن کا صرف 5 سے 10 فیصد وزن کم کرنے سے آپ کے ماہواری کو منظم کرنے اور پی سی او ایس علامات کو بہتر بنانے میں مدد مل سکتی ہے ۔

:وزن میں کمی کی وجہ سے

کولیسٹرول کی سطح میں بہتری آتی ہے

کم انسولین پیداوار

دل کی بیماری اور ذیابیطس کے خطرات میں کمی

کوئی بھی غذا جو آپ کو وزن کم کرنے میں مدد دیتی ہے وہ آپ کی حالت میں مدد کر سکتی ہے۔ تاہم ، کچھ غذا دوسروں پر فوائد رکھ سکتی ہے۔

پی سی او ایس کے لیے غذا کا موازنہ کرنے والے مطالعے سے معلوم ہوا ہے کہ کم کاربوہائیڈریٹ والی خوراکیں وزن میں کمی اور انسولین کی سطح کو کم کرنے دونوں کے لیے کارآمد ہیں۔

ایک کم گلیسیمیک انڈیکس غذا جو پھلوں ، سبزیوں اور سارا اناج سے زیادہ تر کاربوہائیڈریٹ حاصل کرتی ہے وہ ماہواری کو باقاعدہ وزن میں کمی کی خوراک سے بہتر بنانے میں مدد دیتی ہے۔

کچھ مطالعات سے پتہ چلا ہے کہ ہفتے میں کم از کم 3 دن 30 منٹ کی اعتدال پسندی کی ورزش پی سی او ایس والی خواتین کو وزن کم کرنے میں مدد دے سکتی ہے۔ ورزش کے ساتھ وزن کم کرنا بھی اویولیشن اور انسولین کی سطح کو بہتر بناتا ہے ۔

ورزش صحت مند غذا کے ساتھ مل کر بھی زیادہ فائدہ مند ہوتی ہے۔ غذا کے علاوہ ورزش آپ کو تنہا مداخلت سے زیادہ وزن کم کرنے میں مدد دیتی ہے ، اور یہ ذیابیطس اور دل کی بیماری کے خطرات کو کم کرتی ہے ۔ مزید سوالات اور جوابات حاصل کرنے کے لیے نور ہیلتھ زندگی کے ساتھ ای میل اور واٹس ایپ پر رابطہ کرسکتے ہیں۔ noormedlife@gmail.com

Leave a Comment

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s